الطاہر

الطاہر شمارہ نمبر 44
ربیع الاول ۱۴۲۸ھ بمطابق اپریل ۲۰۰۷ع

اردو مین پیج

بزم الطاهر

 

محترم قارئین! السلام علیکم! مزاج بخیر

الطاہر شمارہ نمبر 44 آپ کے ہاتھوں میں ہے۔ ہماری پوری کوشش ہوتی ہے کہ آپ کی آراء و تجاویز کی روشنی میں الطاہر کو بہتر سے بہترین بنایا جاسکے، لہٰذا ادارہ الطاہر آ پ کے مضامین آراء و تبصروں کا ہمیشہ منتظر رہتا ہے۔ امید ہے ہمیشہ کی طرح ہماری حوصلہ افزائی فرماتے رہیں گے۔

آپ کا بھائی محمد جمیل عباسی طاہری


 

﴾ شمارہ نمبر 43 پڑھ کر قلب کو سکون اور راحت حاصل ہوئی۔ کافی اچھے مضامین تھے، خاص طور پر مضمون عورت کا ذکر کروں گا۔ ماشاء اللہ انتہائی مفید معلومات پر مبنی تھا۔ اگر تاریخ کے حوالے سے سلسلہ وار کچھ مضامین شامل کیے جائیں تو میرے خیال سے اس سے نوجوان نسل خصوصاً طلبہ و طالبات کی دلچسپی میں اور اضافہ ہوگا۔

(حافظ امتیاز علی خاصخیلی ۔اسٹیل ٹاؤن کراچی)

بھائی امتیازعلی رسالہ کی پسندیدگی کا شکریہ۔ آپ کی تجویز زیر غور لائی گئی ہے۔

 

﴾ شمارہ نمبر 43 پڑھنے کی سعادت نصیب ہوئی جس میں حضور قبلہ عالم سجن سائیں دامت برکاتہم العالیہ کا خطاب مبارک نہ دیکھ کر بہت افسوس ہوا۔ شمارے میں کافی مضمون قابل ذکر تھے، خاص طور پر روحانی طلبہ جماعت کے حوالے سے مضمون کافی پر اثر تھا۔ آپ سے گذارش ہے کہ مقابلہ ذہنی آزمائش میں اس عاجز کے شہر کا نام شہداد کوٹ لکھا ہے اور اس عاجز کا تعلق قمبر علی خان سے ہے اور ضلع قمبر شہداد کوٹ ہے لہٰذا اس بات پر توجہ دیجیے۔

(محمدآصف ۔۔قمبر علی خان)

غلطی کی طرف توجہ دلانے کا شکریہ۔

 

﴾ میں الطاہر بہت عرصے سے پڑھ رہی ہوں، خاص طور پر حضور قبلہ عالم محبوب سجن سائیں دامت برکاتہم العالیہ کا خطاب بہت شوق سے پڑھتی ہوں۔ لیکن اس بار حضور کا خطاب مبارک نہ پاکر بہت مایوسی ہوئی۔ (ط۔ طاہری)

 

﴾ شمارہ نمبر 43 پڑھا دل کو سکون ملا۔ تمام مضامین اپنی مثال آپ تھے جتنی بھی تعریف کی جائے کم ہے، اور رسالہ کی سائز بہت خوبصورت ہے۔ آپ سے گذارش ہے کہ اس رسالہ کو جلد ماہانہ کیجیے۔ (ہومیو ڈاکٹر محمد اشرف ملک۔ بھریا روڈ)

 

﴾ جیسا کہ ہم حضور قبلہ عالم محبوب سجن سائیں دامت برکاتہم العالیہ کی دعوت اپنے گاؤں میں کرنا چاہتے ہیں، اس کا طریقہ ہمیں بتائیں ۔ (فقیر بدرالدین طاہری۔ لاڑکانہ)

بھائی بدرالدین صاحب حضور قبلہ عالم کی دعوت کے سلسلے میں آپ حضور قبلہ عالم کے پرسنل اسسٹنٹ جناب غلام محمد میمن صاحب سے درگاہ اللہ آباد شریف کے پتے پر رابطہ کریں۔

 

﴾ شمارہ نمبر 43 ویسے بہت شاندار تھا، خاص طور پر درس قرآن اور حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کے مضمون۔ مگر آپ حضور قبلہ عالم محبوب سجن سائیں مدظلہ العالی کا خطاب شمارے میں شایع نہیں کررہے اس کی کیا وجہ ہے؟ (طارق مسعود طاہری۔۔کالج ٹاؤن وہاڑی)

بھائی طارق مسعود صاحب حضور قبلہ عالم کے خطابات کو ایک کتاب ”خطابات طاہریہ“ کی صورت میں شایع کیا گیا ہے آپ اس سے استفادہ کرسکتے ہیں۔

 

﴾ سلام کے بعد عرض ہے کہ رسالہ الطاہر اس دور میں بہت مفید رسالہ ہے۔ آپ سے گذارش ہے کہ اس میں آپ دل چسپ سچے واقعات، انبیاء کے واقعات، خلفائے راشدین کے روداد اور جہادی واقعات وغیرہ شامل کریں۔ (خان سواتی۔ سعید آباد کراچی)

 

﴾ سلام کے بعد عرض ہے کہ شمارہ نمبر 43 پڑھ کر ہمیں بہت خوشی ہوئی ہے۔ آپ نے عورت کے بارے میں جو تحریر لکھی ہے بہت ہی پیاری لگی اور حضور قبلہ عالم کو آپ کی سالگرہ پر مبارک باد پیش کرتے ہیں۔ (آسیہ عتیق۔ چک نمبر 561/EBضلع وہاڑی)

 

﴾ شمارہ نمبر 43 پڑھا اس الطاہر میں خطاب سجن سائیں نہ دیکھ کر مایوسی ہوئی۔ وہ میرا فیوریٹ مضمون ہے۔ اس کے علاوہ ذرا کاغان تک، امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور عورت پڑھ کر بہت ہی مزہ آیا۔ ہمیں مدرسہ البنات طاہریہ کے لیے دوماہی الطاہر کی دس کاپیاں چاہییں، اس کے لیے کیا طریقہ کار ہے۔ (مہرالنساء طاہری۔ معلمہ بنات الطاہریہ دنبہ گوٹھ)

اس سلسلے میں آپ سرکیولیشن مینیجر کی ایڈریس پر خط روانہ فرمادیں، آپ کو رسالے موصول ہوجائیں گے۔

 

﴾ شمارہ نمبر 43 پڑھا جس میں حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی زندگی کے بارے میں مضمون پڑھ کر بہت دل کو سکون ملا۔ آپ سے ایک اپیل کرتا ہوں کہ مہربانی فرما کر الاصلاح سندھی رسالہ بھی الطاہر کے ساتھ شایع کریں۔ (فقیر غلام مصطفی طاہری۔ جامعہ انوار طاہریہ نقشبندیہ)

 

﴾ سلام کے بعد عرض ہے شمارہ نمبر 43 پڑھ کر بہت خوشی ہوئی ہے۔ اللہ تعالیٰ حضور قبلہ عالم کو صحت اور درجات میں اور بلندی عطا فرمائے اور آپ کی جماعت کو دن دگنی رات چوگنی ترقی عطا فرمائے۔ (رابعہ عتیق۔۔چک نمبر 561/EB ضلع وہاڑی)

 

﴾ شمارہ نمبر 43 پڑھا، تمام مضامین اچھے لگے، خاص کر درس قرآن، امام حسین رضی اللہ عنہ، روحانی طلبہ جماعت، بیمارپرسی، عورت، ذرا کاغان تک بہت ہی اچھے ہیں۔ میری دعا ہے اللہ تعالیٰ دوماہی الطاہر کو دن دگنی اور رات چوگنی ترقی عطا فرمائے۔ (فقیر حضور بخش طاہری۔۔حب چوکی)

 

﴾ الطاہر کا 43 واں رسالہ ملا، پڑھ کر بہت خوشی ہوئی۔ حضرت امام حسین کے بارے میں تحریر پڑھ کر ایمان تازہ ہوا۔ شمارہ کو دوماہی کرنے پر آپ کے مشکور ہیں اور امید کرتے ہیں کہ بہت جلد رسالہ ماہانہ ہوجائے گا۔ (محمد حفیظ طاہری۔۔ضلع وہاڑی)

 

﴾ ہر شمارہ بہترین ہوتا ہے اور ہر مضمون بہتر ہوتا ہے۔ میرا دل تو یہ کہتا ہے کہ یہ رسالہ الطاہر بار بار پڑھوں۔ میری آپ سے گذارش ہے کہ جو ذہنی آزمائش والا کوپن ہے اس کوپن کے پیچھے والا حصہ خالی چھوڑدیں گے تو ادب کا خیال ہوگا۔ (محمد شکیل طاہری۔ گجن پور لاڑکانہ)

 

﴾ شمارہ نمبر 43 پڑھا سب مضمون اپنی مثال آپ تھے، خاص کر درس قرآن، حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ اور بیمارپرسی جس سے کافی معلومات میں اضافہ ہوا۔ آپ سے اپیل کی جاتی ہے برائے مہربانی ”ہمارے مسائل اور ان کا حل“ کا سلسلہ شروع کیا جائے بڑی مہربانی ہوگی۔ اس کے علاوہ الطاہر کے صفحات بھی بڑھائے جائیں، مضامین بہت کم ہوتے ہیں۔ آخر میں گذارش ہے کہ ماہانہ 27 ویں شریف کا شیڈول الطاہر میں شایع کیا جائے۔ اس کے علاوہ تینوں تنظیموں کے مرکزی عہدیداران بمع موبائل نمبر درج کریں۔ (فقیر شبیر احمد نقشبندی)

 

﴾ شمارہ نمبر 43 پڑھا دل کو بہت خوشی محسوس ہوئی۔ تمام مضامین بہت پسند آئے۔ آپ سے گذارش ہے کہ کیا بات ہے اس مرتبہ حضور قبلہ عالم محبوب سجن سائیں مدظلہ العالی کا خطاب دلنواز شایع نہیں کیا گیا۔ اور آپ سے گذارش ہے کہ حضور قبلہ عالم کی جماعت کے مدارس کا بھی تعارف کرایا جائے کہ کتنے مدارس اس وقت پوری دنیا میں یا پاکستان میں کام کررہے ہیں اور کہاں کہاں واقع ہیں اور ان کی کارکردگی کیا ہے؟ (محمد رمضان طاہری مغل۔ ٹنڈوالہیار)

 

﴾ پہلی دفعہ خط لکھنے کی جسارت کررہی ہوں۔ ایک عرصہ سے میں ایک منقبت بھیجنا چاہ رہی تھی مگر جرات نہیں ہورہی تھی، مگر آج ہمت کررہی ہوں۔ میں زیادہ تعلیم یافتہ نہیں ہوں، نہ ہی شاعری کی ابجد سے واقف ہوں، مگر یہ منقبت یوں سمجھیں کہ میرے دل کی آواز ہے۔ میری حسرت ہے کہ یہ منقبت الطاہر میں شایع ہو۔ (مسزاعجاز۔ راولپنڈی)

 

﴾ یہ عاجز دعا کرتا ہے کہ اللہ تعالیٰ ہمارے رسالہ الطاہر کو ترقی بخشے اور یہ رسالہ ترقی کرے۔ میں الطاہر میں یہ مضمون بھیج رہا ہوں جس کا عنوان ہے ”صحبت شیخ کامل واجب ہے“ امید ہے کہ آپ یہ مضمون الطاہر میں ضرور شایع کریں گے۔  (شاہنواز احمد چانڈیو طاہری۔ قاضی احمد)

 

﴾ یہ عاجز الطاہر کا رسالہ خریدتا ہے اور خوب مطالعہ کرتا ہے اور اپنے دوستوں کو بھی یہ گفٹ کرتا ہے۔ اب یہ رسالہ دوماہی ہوا ہے، امید ہے کہ آپ جیسے نوجوان اس الطاہر کو ہفتہ وار شایع کرنے کی کوشش کریں گے۔ (حافظ وحید علی بھٹی)